جنوبی کوریا: جلد ہی لوگوں کی عمریں ایک سال کم کیوں ہو جائیں گی؟

’آپ کی عمر کیا ہے؟‘ یہ ایک سادہ سا سوال ہے جس کا جواب واضح اور دوٹوک ہونا چاہیے، لیکن جنوبی کوریا میں رہنے والوں کے لیے اس سوال کا جواب دینا اتنا اسان نہیں ہے۔

جنوبی کوریا میں جب بچہ پیدا ہوتا ہے تو اسے اس کی پیدائش پر ہی ایک سال کا تصور کیا جاتا ہے۔ نئے سال کے پہلے دن اس کی عمر میں ایک سال کا اضافہ ہو جاتا ہے۔ اس کا مطلب ہے یہ کہ دسمبر میں پیدا ہونے والا بچہ صرف چند ہفتوں میں دو سال کا تصور کیا جائے گا۔
عموماً نیا سال آتے ہی اس ملک میں لوگ اپنی عمر میں ایک سال بڑے ہو جاتے ہیں۔ لیکن اب صورتحال بدلنے والی ہے اور جنوبی کوریائی باشندے سنہ 2023 میں اپنی موجودہ عمر سے ایک یا دو سال چھوٹے ہو جائیں گے، کم از کم سرکاری کاغذات کی حد تک۔
رواں ہفتے جنوبی کوریا کی پارلیمنٹ نے کوریا کے عمر کے حوالے سے دو روایتی طریقوں کو ختم کرنے کے لیے ایک قانون منظور کیا، یہ وہ روایتی طریقے ہیں جن کے تحت جنوبی کوریا میں عمر کی گنتی کی جاتی تھی۔
جون 2023 سے، نام نہاد ’کورین ایج‘ سسٹم کی سرکاری دستاویزات میں مزید اجازت نہیں ہو گی اورصرف معیاری، بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ طریقہ باقی رہے گا یعنی جنوبی کوریائی باشندوں کی عمروں کا حساب اس طریقے سے ہو گا جیسے کسی بھی عام انسان کی عمر کا ہوتا ہے۔
جنوبی کوریا کی حکومت باقی دنیا میں عمر کو جانچنے کے نظام کو اپنا کر عوام کی پریشانی کو کم کرنے کے لیے مہم کا وعدہ پورا کر رہی ہے۔

پنجاب حکومت عمران خان کے لانگ مارچ کا حصہ نہیں بنے گی، وزیر داخلہ پنجاب

Shakira could face 8 years in jail

پاکستان میں صحت عامہ کی صورتحال تباہی کے دہانے پر ہے، عالمی ادارہ صحت

اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.